شیخ العالم ایجوکیشنل سوسائٹی کے زیراہتمام محفل مشاعرہ کاانعقاد

سرینگر: (پریس ریلیز)
شیخ العالم ایجوکیشنل اینڈ ویلفیئر سو سائٹی کے اہتمام سے آج میزان پبلشرز کے صدر دفتر بٹہ مالو پر ایک مشاعرہ منعقد ہوا جس کی صدارت معروف اردو افسانہ نگار وحشی سید نے کی جبکہ نور شاہ اور جاوید آذر مہمانانِ خصوصی کے طور تقریب میں موجود تھے۔ اس موقعہ پر کئی نوجوان شعرانے اپنا کلام سنایا اور حاضرین سے داد و تحسین وصول کی۔ مشاعرے کی نظامت سالک جمیل براڑ نے کی۔ مشاعرے میں جن شاعروں نے اپنا کلام سنایا ان میں قتیل مہدی، بشیر چراغ، پرویز مانوس، ڈاکٹر مشتاق حیدر، مرزا بشیر احمد شاکر، راشک اعظمی، صابر شبیر، سہیل سالم، شاد سجاد وغیرہ شامل ہیں۔ تقریب کے آخر پر صدرِ مجلس وحشی ساحل نے کہا کہ اس قسم کی تقاریب کا انعقاد علم و ادب کی جان ہے اور نوجوان شاعروں اور قلم کاروں کی حوصلہ افزائی کے لئے اس قسم کی تقاریب آکسیجن کا درجہ رکھتی ہیں۔ انہوں نے میزان پبلشرز کی ان کاوشوں کو سراہا جن کے تحت وہ اپنا ادارہ ایسی تقریبات کے لئے وقف کئے ہوئے ہیں۔ اپنی تقریر میں نور شاہ نے کہا کہ انہیں آج کی تقریب پر نوجوان چہروں کو دیکھ کر کافی مسرت ہوئی اور یہ سلسلہ جاری رکھا جانا چاہیے۔ انہوں نے میزان پبلشرز کی کاوشوں کو قابلِ تحسین بتا یا۔معروف شاعر اور صحافی جاوید آذر نے اس بھی اسی قسم کے خیالات اور احساسات کا اظہار کیا۔ اس موقعہ پر اپنے خیالات کا اظہار کرتے ہوئے ڈاکٹر مشتاق حیدر نے کہا کہ کشمیری شاعروں نے جس طرح سنگین حالات و واقعات کی منظر کشی کی ہے اس کی کشمیر کے اندر اور باہر کوئی پذیرائی نہ مل سکی۔ محفل میں دیگرشعرا کے علاوہ شیخ العالم ایجوکیشنل اینڈ ویلفیئر سوسائٹی کے صدرغلام نبی کمار اور جنرل سکریٹری محمد اقبال لون کے علاوہ جاوید ماٹجی، صوفی علی محمد، امتیاز علی وارثی وغیرہ موجودتھے۔ تقریب کے آخر پر میزان پبلشرز کے ڈائریکٹرشبیر احمد اور محمد اقبال لون نے مہمانوں کا شکریہ ادا کرتے ہوئے اعلان کیا کہ ان کا ادارہ اردو زبان کی ترقی اور ترویج کے ساتھ ساتھ علم و ادب کے فروغ کے لئے ہمیشہ وقف رہے گا۔